انتخابات 22

انتحابات کو سبوتاژ کیا جا سکتا ہے – یہ کس نے کہا ہے اور کون کرے گا –

اسلام آباد … پیر کے روز سینیٹ اسٹیٹ کمیٹی کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے، انتخابی کمیشن آف پاکستان (ای سی سی) کے سیکرٹری بابر یعقوب نے کہا کہ کچھ بین الاقوامی قواتیں اگلے انتخابات کو ناکام اورسبوتاژ کر سکتے ہیں-

“ہم سمجتھے ہیں کہ بین الاقوامی سطح پر انتخابات ختم کرنے کے لئے کوشش کی جائے گی لیکن تفصیلات شا ئع کرنے کے لئے یہ مناسب نہیں ہوہے – ہم آپ کو بند کیمرہ میٹنگ میں اگاہ کرنے کے لئے تیار ہیں، “سیکریٹری نے سینیٹ کمیٹی کو آگاہ کیا-

سیکرٹری نے کہا کہ ECP 60 دنوں کے اندر انتخابات کو منعقد کرنے کےلیے پرعزم ہے-اور موجودہ سلامتی کا اندازہ 2013 ء کے انتخابات سے پہلے کا کیا ہوا ہے-

t>

2013 کے انتخابات کے دوران، کوئٹہ میں نہ صرف بہت سے سیکورٹی معاملات تھے- جہاں بم دھماکے میں ایک ضلع انتخابی کمشنر مر گیا تھا -بلکہ بلوچستان میں پانچ مقامات پر گرینڈ حملے بھی ہوۓ تھے-. خیبر پختونخواہ اور کراچی میں سیکورٹی کے مسائل بھی پیدا ہوئے ہیں. اسی طرح کے واقعات دوبارہ ہوسکتے ہیں اور ہمیں ڈار ہیں کہ ریٹرننگ افسران کے تربیتی مراکز پر حملہ کیا جا سکتا ہے، لہذا ہم نے تمام صوبوں کے سیکرٹریوں کو سیکورٹی کو یقینی بنانے کے لے کہا ہے معاون صدر کے تربیتی افسران کی تربیت اس وقت جاری ہے. ”

 
انہوں نے کمیٹی کو بھی بتایا کہ ای سی سی نے ملک میں 85،000 پولنگ اسٹیشنوں میں سے 20،000 کیمروں کو انسٹال کرنے کی منصوبہ بندی کی ہے، لیکن اس نمبر کو 60،000 تک بڑھانے کی ضرورت ہے.

مسٹر یعقوب نے اس سوال کے جواب میں بھی وضاحت کی کہ پولنگ اسٹیشنوں پر مسلح افواج کے اہلکار تعیناتی پرعمل نہیں ہوگا-

“ہم نے افوج سے بات کی ہے لیکن ہمیں یہ سمجھنا چاہئے کہ ان کے لئے مشرق وسطی اور مغربی سرحدوں سے اہلکاروں کو بلانا ہوگا – جو ممکن نہیں ہوگا- مجھے لگتا ہے کہ فوج کے حکام صرف حساس پولنگ سٹیشنوں پر ہی تغیناتی کی جائیں گی – دوسری طرف، تقریبا 350،000 پولیس اہلکاروں کی ضرورت ہوگی. “

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں