96

پاکستان ہاکی ٹیم کے لیجنڈ منصور احمد دل کی بیماری کے باعث ہفتہ کے روز ایک طویل علالت کے بعد خالق خقیقی جا ملے

پاکستان ہاکی ٹیم کے لیجنڈ منصور احمد دل کی بیماری کے باعث ہفتہ کے روز ایک طویل علالت کے بعد خالق خقیقی جا ملے ، منصور احمد کو ورلڈ کپ کا ہیرو مانا جاتا تھا ، انکی عمر 49 سال تھی-

منصور نے 1986 اور 2000 کے درمیان 338 بین الاقوامی ہاکی کھیلوں میں پاکستان کی نمائندگی کی تھی. انہوں نے ایک مختصر وقت کے لئے پاکستان کی نمائندگی بھی کی تھی ، 49 سالہ منصور احمد دل کی پیچیدہ بیماریوں میں مبتلا تھے . احمد نے 1994میں سڈنی میں ورلڈ کپ فائنل میں نیدرلینڈ کے خلاف زبردست کارکردگی دکا کر پاکستان کو فتح دلوائی تھی –

انکے آخری ایام میں انکے کہنا تھا کہ :

“اندرا گاندھی کپ (1989) اور دوسرے واقعات میں بھارت کو دھندلا کر میں نے کھیل کے میدان پر بہت زیادہ بھارتی دلوں کو توڑا ہے ، اب مجھے بھارت میں دل کے علاج کی ضرورت ہے اور اس کے لئے مجھے بھارتی حکومت کی مدد کی ضرورت ہے” ،

t>

بھارت اور پاکستان تعلقات، کھیلوں اور ثقافتی رابطوں سمیت، ممبئی میں 2008 کے عسکریت پسندوں کے حملوں کے بعد تقریبا ختم ہو گئے، جس میں نئی دہلی نے پاکستان کے عسکریت پسند گروپوں پر الزام لگایا-

تعلقات خراب بونے کے باوجود، پاکستانی طبی ویزوں کے لئے بھارت جانے کے لیے درخواست دینے کا اہل ہے، بھارت جو طبی دنیا میں کافی نام رکھتا ہے –

احمد – جو 338 بین الاقوامی میچوں میں 338 گولز بنائے تھے، نے 1986 میں 2000 سے لے کر ایک کیریئر میں تین اولمپکس اور دیگر اعلی درجے کی میچوں میں شرکت کی تھی-

منصور احمد بھارت جانے کی خواہش پوری نہ ہو سکی اور وہ خالق خقیقی سے جا ملے –

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں